(ملا جلا دن ,انشا ( مختصر ادبی انشایہ, A day as usual, Urdu/Hindi flash fiction pod cast

Inshay is a new genre in Urdu/Hindi literature. The listening time for this flash fiction short story is slightly more than 3 minutes. Enjoy reading the text below if you are familiar with Urdu script or Urdu/Hindi written in Roman

ملا جلا دن
  مختصر ادبی انشایہ
صبح دم ساحل کے ساتھ سڑک پر دھیرے سے چلتے ہوے پہلے تو اسے لگا وہ
 اکیلا ہے . پھر نیلی ٹی شرٹ ، سفید نیکر پہنے جاگنگ کرتا نوجوان پاس سے گذرا  اس کے بعد طبی ہدایت پر کاربند سست قدم بوڑھا اور مستقل بولتی بیوی . اس سال بھی نہیں آ رہے وہ . نہیں لگتا دل بہو اور بچوں کا تو ارشد بیچارہ بھی کیا کرے . ہم بھی توسہار نہ سکے ولایتی آسائش کا اکیلا پن اور دن بھر اسکول اور دفتر سے واپسی کا انتظار . اس نے رفتار تیز کر دی . ہائی کورٹ کے سامنے جیل کی گاڑی آ کر رکی . ہتھکڑی بندھے ہاتھ پیشی کے لئے اترے . اندھے قانون کو یتیمی ، بھوک، تعلیم سے محرومی ، سڑکوں پر در بدری کی مجرمانہ سماجی غفلت منظور . لیکن جرم نامنظور . سول ہسپتال کے قریب چھجے کے نیچے ٹھٹہ سے آے ایک مہینے سے رہائشی سوے ہوے بچوں کے قریب جاگی عورت ے آپ ہی آپ سسکی بھری . ماں کی دی ہوئی بالیاں کانوں  سے اتاریں اور رخصتی نظروں سے انھیں ہتھیلی پر رکھ  کر دیکھا . مٹھی میں شوہر کی دوائیوں کی پرچی زور سے دبائی اور چھجے سے باہر نکل گئی
وهاں سے وہ کھچا کھچ بھرے پریس کلب کے ہال میں داخل ہوا تو مسکراہٹوں نے اس کا اور تالیوں نے لیڈر کا استقبال کیا . نہ جھکنے والی تقریر نے جوشیلے نعروں کے ہار پہنے . پھر کوٹھی کے بند کمرے میں مفاہمت نے فیملی سمیت بھوربن کے پانچ ستاروں والے ہوٹل میں دو ہفتے قیام اور احتجاج ملتوی کرنے کی حامی بھری. کالج کی کم سنی بہت دیر کی تلاش کے بعد چنے ہوے وش کارڈ کو ہاتھ میں لے کر دھیرے سے مسکرائی . گلی کی ٹیم نے چندے کی رقم سے کرکٹ بال خریدی . سب نےباری باری گیند ہاتھ میں تھامی اور چہکے . سیلز مین نے سفری بیگ کو دونوں ہاتھوں سے سر سے اونچا اٹھا کر پکے فرش پر دے مارا . مضبوطی سے مطمئن ہو کر خریدار نے سر ہلایا . مالک نے رقم گنی اور ملتا جلتا دوسرا بیگ گاڑی میں رکھوایا . فقیر نے آواز لگائی ، سب کا بھلا ، سب کی خیر
اب پورا شہر رات کے گھیرے میں تھا . وہ نیند سے بوجھل وجود لئے آنگن میں کھڑے توانا نیم پر تھکن بن کر گرا تو پتے تھر تھر اے . چاندنی اسے دیکھ کر بولی . کیسا تھا آج کا دن ؟ ہوا کے جھونکے نے طویل گفتگو سے بچتے ہوے کہا. وہی معمول کا ملا جلا دن. چاندنی نے ساحل کے ساتھ والی سڑک کا رخ کیا
شارق علی                          
IM000204.JPG MILA JULA DIN,

Subh dum sahil kay saath sardak per dheeray chultay hoay pehlay tau ussay laga woh akaila hay. Phir neeli T shirt, sufaid nicker pehnay jogging kerta nojawan pass say guzra. Uss kay baad tibbi hidayat per karbund sust qadam bordha aur mustaqil bolti biwi. Iss saal bhi nahin aa rahay wo. Nahin lagta dil bahoo aur bachoon ka tau Arshad baychara bhi kya karay. Hum bhi tau sahar na sakay wilaiti asaish ka akaila pun aur din bhur school aur dufter say wapsi ka intizar. Uss nay raftaar tez ker dee. High Court kay samnay jail ki gardi aa ker ruki. Huthkardi bundhay haath paishi kay liye utray. Andhay qanoon ko yateemi, bhook, taleem say mehroom sardkon per lawaris dur badari ki mujrimana samaji ghuflat manzoor. Laikin jurm namanzoor. Civil huspatal kay qareeb chujjay kay neechay thatta say aaey aik maheenay say rahaishi soay hoay bachon kay qareeb jagi aurat nay aap hee aap siski bhuri.  Maan ki dee hoi baliyan kanon say utareen aur rukhsati nazron say hathaili per rukh ker unhain dekha. Muthi main shoher ki dawaiyon ki parchi zore say dabai aur chujjay say baher nikal gai.Wahan say wo khatcha khuch bhuray press club kay hall main dakhil hoa tau kai muskurahaton nay uss ka aur bhurpoor taliyon nay leader ka istaqbal kya. Na jhuknay wali taqreer nay josheelay naron kay haar pehnay. Phir kothi kay bund kamray main mafahmut nay family samait bhurbun kay panch sitaron walay hotel kay do huftay qayam aur ahtejaj multavi kenay ki hami bhuri. College ki kum sinni buhut dair ki talash kay baad chunay hoay wish card ko haath main liye dheeray say muskurai.  Gali ki team nay chunday ki raqam say criket ball kharidi. Sub nay bari bari gaind haath main thami aur chehkay. Sales man nay pahayon walay sufri bag ko donon hathon say sur say ooncha utha ker pakkay fursh per day mara. Mazbooti say mutmain ho ker khareedar nay sur hilaya. Malik nay raqam gini aur milta julta doosra baig gardi main rakhwaya. Faqir nay awaz lagai. Sub ka bhala sub ki khair.

Ab pura sheher raat kay ghairay main tha. Wo neend say bojhul wujood  liye aangan main kharday tawana neem per thakan bun ker gira tau pattay thartharay. Chandni ussay daikh ker boli. Kaisa tha aaj ka din?. Hawa kay jhonkay nay taweel guftugo say buchtay hoay kaha. Wuhi mamool ka mila jula din. Chandni nay sahil kay saath wali sardak ka rukh kiya.

Written and narrated by
Shariq Ali

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *